نظر اک چمن سے دوچار ہے نہ چمن چمن بھی نثار ہے

نظر اک چمن سے دوچار ہے نہ چمن چمن بھی نثار ہے نظر اک چمن سے دوچار ہے نہ چمن چمن بھی نثار ہے عجب اس کے گل کی بہار ہے کہ بہار بلبل زار ہے نہ دل بشر ہی فگار ہے کہ ملک بھی اس کا شکار ہے یہ جہاں کہ ہژدہ ہزار ہے …

نظر اک چمن سے دوچار ہے نہ چمن چمن بھی نثار ہے Read More »