Karim o Kirdigar Tu Azim o Zee Waqar Tu – Hamd Lyrics

 

 

کریم و کردگار تو، عظیم و ذی وقار تو – حمد باری تعالیٰ

Kalaam : Hazrat Allama Saim Chishti

کریم و کردگار تو، عظیم و ذی وقار تو
دلو کا ہے قرار تو، چمن چمن بہار تو
Kareem o Kirdigar Tu, Azeem o Zee Waqar Tu
Diloñ Ka Hai Qarar Tu, Chaman Chaman Bahar Tu

خدائے ذوالمنن ہے تو، فروغِ انجمن ہے تو
Khuda-e Zulmanan Hai Tu, Farogh-e Anjuman Hai Tu

 

قدیم و لازوال تو، ازل سے بے مثال تو
جمال تو جلال تو، کمال کا کمال تو
Qadeem o La Zawaal Tu, Azal Se Be Misaal Tu
Jamal Tu Jalal Tu, Kamaal Ka Kamaal Tu

ترا جمال زندگی ، ترا جلال زندگی
Tera Jamal Zindagi, Tera Jalal Zindagi

 

ترا نشاں قدم قدم، ترا گزر حرم حرم
ترے سوا عدم عدم، تری ادا کرم کرم
Tera nishaañ Qadam Qadam, Tera Guzar Haram Haram
Tere Siva Adam Adam, Teri adaa Karam Karam

یہاں بھی نور بار تو، وہاں بھی کردگار تو
Yahañ Bhi Noor-Baar Tu, Wahañ Bhi Kirdigar Tu

 

تجھی سے گل کی تازگی، تجھی سے دل کی زندگی
تجھی سے چاند چاندنی، تجھی سے نور روشنی
Tujhi Se Gul Ki Taazgi, Tujhi Se Dil Ki Zindagi
Tujhi Se Chaand Chaandni, Tujhi Se Noor Roshni

تجھی سے نکہتِ چمن، تجھی سے گل کا بانکپن
Tujhi Se Nik’hat-e Chaman, Tujhi Se Gul Ka Baañkpan

 

عجیب اضطراب ہے، یہ زندگی عذاب ہے
حقیقتوں سے دور ہوں، قدم قدم سراب ہے
Ajeeb Iztarab Hai, Yeh Zindagi Azaab Hai Haqeeqtoñ Se Door Hun, Qadam Qadam Saraab Hai

مرے خدا بچا مجھے، سکون کر عطا مجھے
Mere Khuda Bacha Mujhe, Sukoon Kar A’taa Mujhe

 

اٹھی ہیں غم کی آندھیاں، دماغ ہے دھواں دھواں
مرے کریم تھام لے، شدید ہے یہ امتحاں
UThi haiñ gham ki aandhiyan, dimagh hai dhuañ dhuan
Mire Karim thaam le, shadeed hai ye imtihañ

ترے سوا کسے کہوں، خدا خدا کسے کہوں
Tere siwa kise kahuñ, Khuda Khuda kise kahuñ

 

اگرچہ تجھ سے دور ہوں، مگر ترے حضور ہوں
بھٹک گیا ہوں اس لئے، کہ محض بے شعور ہوں
Agar-che tujhse door hooñ, magar tire huzur hooñ
Bhatak gaya hoon isliye ke mahez be sha’oor hoon

خدایا نور بخش دے، مجھے شعور بخش دے
Khudaya Noor bakhsh de, mujhe sha’oor bakhsh de

 

رحیم ہے تو رحم کر، مری خطا سے در گذر
ترے کرم کا ذوق ہے، سوال ہو سوال پر
Rahim hai tu rahm kar, miri khata se dar-guzar
Tire karam ka zauq hai, sawaal hooñ sawal per

گدائے بے مثال ہوں، سوال ہی سوال ہوں
Gadae be misaal hooñ, sawal hi sawal hoon

 

مری نظر کو کیا ہوا، مری خبر کو کیا ہوا
دل و جگر کو کیا ہوا، جہان زر کو کیا ہوا
Miri nazar ko kya hua, miri khabar ko kya hua
Dil o jigar ko kya hua, jahaane zar ko kya hua

عجب نصیب سو گئے، سبھی فرار ہو گئے
Ajab naseeb so gaye, sabhi faraar ho gaye

 

جہاں کو غم سناؤں کیا، جہان غم دکھاؤں کیا
گرا ہوں خود اٹھاؤ کیا، تجھے میں اب بتاؤ کیا
Jahañ ko gham sunauñ kya, jahan e gham dikhauñ kya
Gira hooñ khud uthauñ kya, tujhe main ab batauñ kya

خدایا تو بصیر ہے، علیم ہے خبیر ہے
Khudaya tu baseer hai, Aleem hai khabeer hai

 

مرے خدائے لم یزل، عطا ہو مشکلوں کا حل
مصیبتوں کی بھیڑ میں گھرا ہوا ہو آج کل
Mire khuda-e lam yazal, ata ho mushkilon ka hal
Musibatoñ ki bheed me ghira hua hooñ aaj-kal

غم و الم ہے یاس ہے، ترے کرم کی آس ہے
Gham o alam hai yaas hai, tire karam ki aas hai

 

تو رب کائنات ہے، تو خالقِ حیات ہے
تری ہی ذات کو فقط، دوام ہے ثبات ہے
Tu rabbe kayenat hai, tu khaaliq-e hayat hai
Teri hi zaat ko faqat dawaam hai sabaat hai

بفیض ذات کبریا عطا ہوں میرا مدعا
Ba faiz e zaat e kibriya ata ho mera mudda’a

 

کرم ترا کہاں نہیں، عیاں نہیں نہاں نہیں
بھریں نہ خالی جھولیاں، یہ رسم تیرے ہاں نہیں
Karam tera kahan nahin, ayaañ nahi nihañ nahi
Bhareñ na khaali jholiyañ, ye rasm tere haañ nahi

تری عطا کی حد نہیں، سوال مسترد نہیں
Teri ata ki had nhi, sawaal mustarad nahi

 

تیری عطا عظیم تر، تیری سخا عظیم تر
مری خطا بڑی سہی، ہے در ترا عظیم تر
Teri A’taa Azeem Tar, teri sakha Azeem Tar
Meri Khata Badi sahi, hai tera Dar Azim tar

قبول ہو دعا مری، معاف ہو خطا مری
Qabool Ho Dua Meri, Mu’aaf Ho Khata Meri

 

میرا جہاں الم کا گھر، نہال دل ہے بے ثمر
مصیبتوں کی شوخیاں ہیں الامان و الحذر
Mera Jahan Alam ka ghar nihali Dil Hai base Amar musibat ancy shokhiyan Aman o Al Hazar

مرے خدائے محتشم، کرم کرم کرم کرم
Mere Khuda-e mohtasham, karam karam karam karam

 

گھڑی عجیب آ گئی، حیات سٹپٹا گئی
جہان کیف دیکھ کر، نظر فریب کھا گئی
Ghadi Ajeeb a Gai, Hayat satpata gai
Jahan e Kaif dekhkar nazar fareb kha gai

جہان کیف کچھ نہیں، مجھی میں حیف کچھ نہیں
Jahan ne Kaif Kuchh Nahin, Mujhi Mein Haif Kuchh Nahin

 

تو ہی تو تھا تو ہی تو ہے، تجھی سے سر تجھی سے لے
تجھی سے معرفت کی مئے، تجھی سے ہے وجود شے
Tu Hi To Tha, Tu Hi To Hai, Tujhi Se Sur, Tujhi Se Lai
Tujhi Se Marfat ki Mai, Tujhi Se Hai wajood e Shai

دلوں کا ہے سرور تو، جہان رنگ و نور تو
Dilon Ka Hai suroor Tu, Jahan e Rang o Noor Tu

 

تجھی سے سب تجھی میں سب، تجھی سے ہیں سبھی سبب
تمام عالموں کے رب، سبھی کو ہے تری طلب
Tujhi Se Sab Tujhi Main Sab, Tujhi se hai Hain sabhi sabab
Tamam Alam ke Rabb, sabhi Ko Hai Teri Talab

سبھی کا آسرا ہے تو، سبھی سے ماوریٰ ہے تو
Sabhi ka aasra hi tu, Sabhi se maawara hai tu

 

جہان رنگ و بو توئی، جہاں کی آبرو توئی
درخشاں سو بسو توئی، وحید و وحدہٗ توئی
Jahane Rang o Boo Tui, Jahañ ki Aabru tui
Darakhshañ soo ba soo tui, Waheed o Wahda’hoo tui

بصیر تو حبیب تو، قریب سے قریب تو
Baseer tu Habeeb Tu, Qareeb se qareeb tu

 

رفیق و کارساز تو، شفیق و بے نیاز تو
فراز کا فراز تو، فقیر کو نواز تو
Rafeeq o kaarsaaz tu, shafeeq o be niyaz tu
Faraaz ka Faraaz tu, faqeer ko nawaaz tu

گدا کو زالجلال دے ، مری بلا کو ٹال دے
Gada ko Zul-Jalal de, meri bala ko taal de

 

جفا ملی جدھر گیا، میں زندگی سے ڈر گیا
جہاں سے جی ہے بھر گیا، میں ٹوٹ کر بکھر گیا
Jafa mili jidhar gaya, Maiñ zindagi se dar gaya
Jahañ se jee hai bhar gaya, Maiñ toot kar bikhar gaya

بچالے مجھ کو اے خدا ، کرم ہو بہر مصطفیٰ
Bacha le mujhko aye Khuda, karam ho bahr-e Mustafa

 

گرا عجیب کوہ غم، بنا ہوں پیکر الم
بڑھے ہزار پیچ و خم ، ہیں ٹھوکریں قدم قدم
Gira Ajeeb Koh-e gham, bana hooñ paikr-e alam
Badhe Hazaaroñ Peich o KHam, hain thokaren qadam qadam

یہ زندگی محال ہے، کرم کا بس سوال ہے
Ye zindagi muhaal hai, karam ka bas sawal hai

 

الہٰی پر خطا ہوں میں، گدائے بے نوا ہوں میں
سدا سے بے وفا ہو میں، بھٹک بھٹک گیا ہوں میں
Ilaahi purkhata hun maiñ, gada-e be nawa hun main
Sada se bewafa hun main, bhatak bhatak gaya hun main

ہوں دیکھتا ادھر اُدھر گئی ہیں منزلیں کدھر
Hoon dekhta idhar udhar, gayi hain manzilen kidhar

 

عزیز تو حقیر میں، غنی ہے تو فقیر میں
حکیم تو ظہیر میں ، ہوں نفس کا اسیر میں
Aziz Tu haqeer maiñ, ghani hai tu faqeer main
Hakeem tu Zaheer main, hoon nafs ka aseer main

کدورتوں سے باز رکھ، نظر میں چارہ ساز رکھ
Kudooratoñ se baaz rakh, nazar mein chaara saaz rakh

 

فنا ہوں میں بقا ہے تو ، ہوں مرض میں دوا ہے تو
سوال میں سخا ہے تو، گدا ہوں میں خدا ہے تو
Fana hun main Baqa hai tu, hun marz main dawa hai tu
Sawal main sakha hai tu, gada hun main Khuda hai tu

طلب ہے اضطرار ہے، کرم کا انتظار ہے
Talab hai iztiraar hai, karam ka intizar hai

 

کریم تو ذلیل میں، جمیل تو رذیل میں
عظیم تو قلیل میں، خطا کا سنگ میل میں
Kareem tu zaleel main, Jameel tu razeel main
Azeem tu qaleel main, khata ka Sang-e meel main

نگاہِ فیض بار کر، بھنور سے مجھ کو پار کر
Nigah e faiz baar kar, bhañwar se mujhko paar kar

 

ترا کرم ہے بیشتر، مرا سوال مختصر
سبھی پے وا ہے تیرا در، کرم ہو میرے حال پر
Tera karam hai beshtar, mera sawal mukhtasar
Sabhi pe wa hai tera dar, karam ho mere haal par

محیط و بیکراں ہے تو، بڑا ہی مہرباں ہے تو
Muheet o be karaañ hai tu, bada hi mehrbaañ hai tu

 

عروج پر ہے بیکسی، کمال پر ہے بے بسی
عطا ہو صائم آگہی، دکھا دے مجھ کو روشنی
Urooj par hai Bekasi, Kamaal par hai bebasi
A’taa ho ‘Saim’ aagahi, dikha de mujhko roshni

ہے نور تو جہان کا، زمین و آسمان کا
Hai Noor tu jahaan ka, Zameen o aasmaan ka

صائم چشتی

By sulta